کشمیرکی حیثیت تبدیل نہیں کی جاسکتی، اقوامِ متحدہ کےسیکرٹری جنرل کاکشمیرکی صورتِ حال پراظہار تشویش

اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیو گوٹریس نے کہا ہے کہ وہ جموں و کشمیر کی صورت حال پر نظر رکھے ہوئے ہیں اس معاملے پر انھیں تشویش لاحق ہے۔سیکریٹری جنرل نے ’’انتہائی تحمل سے کام لینے‘‘ کی اپیل کی۔

اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انٹونیو گوٹریزنے کہاہےکہ کشمیر کی حیثیت تبدیل نہ کی جائے،حتمی فیصلہ اقوام متحدہ کے چارٹر اور سلامتی کونسل کی قراردادوں کے مطابق ہوگا، حالات پرنظر ہے، فریقین تحمل سے کام لیں

انھوں نے کہا کہ خطے کے بارے میں اقوام متحدہ کا مؤقف عالمی ادارے کے چارٹر اور سلامتی کونسل کی متعلقہ قراردادوں کا تابع ہے۔

اقوام متحدہ کے سربراہ کا یہ بیان اُن کے ترجمان نے جمعرات کو جاری کیا۔

ترجمان نے بتایا کہ سیکریٹری جنرل نے 1972ء کے سمجھوتے کا حوالہ دیا ،جس میں بھارت اور پاکستان کے درمیان باہمی تعلقات سے متعلق امور کا ذکر ہے، جسے شملہ معاہدے کے نام سے بھی جانا جاتا ہے۔

سمجھوتے میں کہا گیا ہے کہ جموں اور کشمیر کی حتمی حیثیت کا تصفیہ اقوام متحدہ کے منشور کے مطابق پرامن ذرائع سے کیا جائے گا۔

ترجمان نے کہا کہ بھارتی کشمیر میں پابندیوں کے بارے میں موصول ہونے والی رپورٹوں پر بھی سیکریٹری جنرل کو تشویش ہے، جس کے نتیجے میں علاقے میں انسانی حقوق کی صورت حال پیدا ہو سکتی ہے۔

انتونیو گوٹریس نے تمام فریقوں پر زور دیا کہ وہ ایسے تمام اقدام سے اجتناب کریں جو جموں اور کشمیر کی حیثیت پر اثرانداز ہو سکتے ہوں۔

امریکا،سعودی عرب،متحدہ عرب امارات،یورپی یونین اورملائیشیانے مقبوضہ کشمیر کی صورتحال پرگہری تشویش کااظہارکرتےہوئےدونوں ملکوں سےتحمل اوربات چیت سےکشیدگی کم کرنےکی اپیل اورکشمیریوں کےحقوق یقینی بنانےکامطالبہ کیا ، امریکا کاکہناہےکہ ہمارا موقف نہیں بدلا، بھارتی فیصلے کےوسیع مضمرات ہونگے، بھارتی فیصلے سے خطے میں عدم استحکام بڑھے گا،ملائیشیا کا کہناہےکہ سلامتی کونسل کی قراردادوں پر عملدر آمد ضروری ہے، سعودیہ کاکہناہے کہ صورتحال تشویشناک،جائزہ لےرہےہیں، متحدہ عرب امارات کاکہناہےکہ خطے کے امن کیلئے تعمیری مذاکرات کیے جائیں۔

کشمیرکی حیثیت تبدیل نہیں کی جاسکتی، اقوامِ متحدہ کےسیکرٹری جنرل کاکشمیرکی صورتِ حال پراظہار تشویش” ایک تبصرہ

Leave a Reply

%d bloggers like this: