چیلی میں‌میٹرو کرایوں‌میں‌اضافے کے خلاف پرتشدد مظاہرے، کرفیو نافذ کر دیا گیا

لاطینی امریکہ کے ملک چلی میں‌میٹرو کرایوں‌میں‌اضافے کے خلاف احتجاجی مظاہروں‌نے پر تشدد تحریک کا رخ اختیار کر لیا، پر تشدد مظاہروں‌کے دوران تین افراد ہلاک ہو گئے جبکہ میٹر سٹیشن اور ٹرینوں‌سمیت بسوں، گاڑیوں‌اور دیگر املاک کو آگ لگا دی گئی. دارالحکومت سینٹیاگو سمیت ملک کے کئی علاقوں میں کرفیو نافذ کردیا گیا ہے۔

فرانسیسی خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق سینٹیاگو کی میئر کارلا روبیلر نے بتایا کہ اتوار کی صبح دارالحکومت کی سپر مارکیٹ میں آگ لگنے سے تین افراد ہلاک ہوئے جبکہ مظاہرین اور سکیورٹی فورسز کے مابین پرتشدد جھڑپوں کا سلسلہ جاری ہے۔

روبیلر نے نامہ نگاروں کو بتایا: ’ایک سپر مارکیٹ میں آتشزدگی کے نتیجے میں تین افراد ہلاک ہوئے۔ مرنے والے افراد میں دو جھلس کر ہلاک ہوئے جبکہ تیسرے شخص کو تشویش ناک حالت میں ہسپتال لے جایا گیا، جو بعدازاں زخموں کی تاب نہ لاکر دم توڑ گیا۔‘

لیکن سوال یہ ہے کہ لاطینی امریکہ کے سب سے مستحکم ملک میں آخر عوام کیوں سڑکوں پر نکلنے پر مجبور ہوگئے ہیں؟ اس کا جواب ہے سماجی اور معاشی مسائل، جن سے تنگ آکر چلی کے عوام بڑے پیمانے پر مظاہروں میں شرکت کر رہے ہیں اور جنہیں روکنے کے لیے حکومت طاقت کا استعمال کر رہی ہے۔

سینٹیاگو میٹرو 140 کلومیٹر طویل نیٹ ورک کے ساتھ جنوبی امریکہ کا سب سے بڑا اور جدید ترین ٹرانسپورٹ سسٹم ہے جو چلی کے عوام کے لیے بڑے فخر کا باعث تھا۔

چلی میں فی کس آمدنی 20 ہزار ڈالر ہے جو لاطینی امریکہ کے کسی بھی ملک سے زیادہ ہے۔ اس سال ملک کی متوقع معاشی نمو 2.5 فیصد اور مہنگائی صرف دو فیصد ہے، لیکن صحت اور یوٹیلیٹی اخراجات میں اضافے، کم پینشن اور معاشرتی عدم مساوات سے عوام کو مایوسی کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ سرمایہ دارانہ نظام معیشت میں‌ ترقی کے جو پیمانے متعین کئے جاتے ہیں انکی بنیادی وسیع تر عوامی استحصال پر رکھی جاتی ہیں. جو معاشرتی عدم مساوات، غربت اور عمارت کے مابین خلیج میں‌تفاوت بڑھانے کا سبب بنتی ہیں.

ماہرینِ معاشیات کا کہنا ہے کہ میٹرو کرائے میں اضافے نے ایک ایسے معاشرے کو بیدار کرنے میں مدد دی، جو 1973 سے 1990 کے دوران آمریت کے خوفناک واقعات کے بعد تشدد سے نفرت کرنے لگے تھے۔

دہائیوں بعد چلی میں پُرتشدد مظاہروں کے بعد ایمرجنسی کا نفاذ کیا گیا ہے اور اتوار کی صبح سے سینٹیاگو میں کرفیو نافذ کر دیا گیا، جہاں مظاہرین نے ایک روز قبل بسوں اور میٹرو سٹیشنز کو نذرِ آتش کر دیا تھا جبکہ انسدادِ فسادات پولیس سے جھڑپوں میں کئی افراد زخمی ہو گئے تھے۔

ایمرجنسی کا چارج سنبھالنے والے چلی فوج کے جنرل جیویئر ایٹوریاگا کا کہنا تھا: ’آج پیدا ہونے والی خوفناک صورتحال اور پرتشدد کارروائیوں کا تجزیہ کرنے کے بعد، میں نے مکمل کرفیو کے ذریعے شہری آزادی اور نقل و حرکت کو معطل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔‘

اے ایف پی کی ویڈیو میں دیکھا جا سکتا ہے کہ کیسے سکیورٹی فورسز مظاہرین پر واٹر کینن سے پانی کی بوچھاڑ کر رہی ہیں اور انسدادِ فسادات پولیس نوجوانوں کو وین میں ٹھونس رہی ہے۔

صدر سیبسٹین پینیرا نے مظاہرین سے یہ کہتے ہوئے اپیل کی کہ ’ایسا کرنے کی درست وجوہات ہیں لیکن انہیں پُر امن طریقے سے مظاہرہ کرنا چاہیے اور کسی کو بھی یہ حق نہیں ہے کہ وہ وحشیانہ جرائم کا ارتکاب کرے۔‘

ہزاروں مظاہرین نے جمعے کو سینٹیاگو اور دیگر شہروں میں برتنوں کو پیٹنے کے ساتھ مظاہروں کا آغاز کیا تھا جس سے ان کی معاشی اور معاشرتی حالات پر شدید غم و غصے کی عکاسی ہوتی ہے۔

چلی کے عوام نالاں ہیں کہ سماجی اور معاشی عدم مساوات سے امیر اور غریب کے مابین فاصلہ بڑھ گیا ہے۔

جمعے کو ہی شہر کے تجارتی مرکز اور صدارتی محل کے باہر پُرتشدد جھڑپیں شروع ہوگئی تھیں۔ بد امنی کا آغاز میٹرو کے ٹکٹوں کی قیمتوں میں اضافے کے خلاف طلبہ کے احتجاج سے ہوا تھا۔

جنوری میں میٹرو کے کرایوں میں 20 پیسو (چلی کی کرنسی) کا اضافہ کیا گیا تھا اور حکومت کا موقف تھا کہ ایسا تیل کی بڑھتی ہوئی قیمتوں کے باعث کیا گیا ہے۔

Leave a Reply

Translate »
%d bloggers like this: