بھارتی کشمیر: بگلیہار ڈیم کی انسانی قیمت، دستاویز فلم برطانیہ میں‌نمائش کیلئے پیش

بھارت کی طرف سے اپنے زیر انتظام کشمیر میں تعمیر کئے جانے والے بگلیہار ڈیم کی وجہ سے کشمیریوں کو جس تکلیف دہ صورتحال سے دوچار ہونا پڑا ہے اسکی ایک فلم میں بخوبی نشاندہی کی گئی ہے۔

خبر رساں ادارے ساوتھ ایشین وائر کے مطابق فلم بگلیہار ڈیم کی انسانی قیمت نامی فلم صحافی راقب حمید نائک کی ہدایت کاری میں بنائی گئی ہے اور یہ برطانیہ میں قائم ماحولیاتی خبر رساں ادارے تھرڈ پول میں دکھائی گئی ۔فلم میں بتایا گیا ہے کہ کہ کس طرح بھارتی زیر انتظام جموں کشمیر میں جموں خطے کی وادی چناب میں بگلیہار ڈیم نے کئی خاندانوں کا معاش ختم کردیا اور ڈیم کی تعمیر کے باعث بے گھر ہونے والے لوگ ایک عشرے بعد بھی غربت اور قرض کی لپیٹ سے باہر نہیں آسکے ہیں۔

فلم میں بتایا گیا کہ سب کچھ کھونے کے نتیجے میں متاثرین کو ذہنی صحت کے مسائل کا سامنا بھی ہے۔ صحافی راقب کا کہنا ہے کہ ڈیم جموں و کشمیر میں مقامی لوگوں کی زندگیوں کو تباہی کا شکار کر رہے ہیں اوریہ فلم ان مسائل کو اجاگر کرنے کے مقصد سے بنائی گئی ہے۔

دریائے چناب پر پل ڈوڈہ کے کم از کم 65 کلو میٹر نیچے بہا پر واقع بگلیہار ڈیم نے پانی کی سطح میں اضافے کے بعد چودہ سو سے زیادہ افراد کو نقل مکانی پر مجبور کردیا اور سڑکوں، مکانات اور دکانوں سمیت سب کچھ ڈیم میں غرق ہو گیا۔پل ڈوڈہ جو جموں خطے کے آس پاس کے درجنوں دیہاتوں کا ایک بڑا کاروباری مرکز تھا اب نصف دریائے چناب میں ڈوب چکا ہے۔ 2008 تک ضلع ڈوڈہ میں یہ قصبہ 400 سے زیادہ خاندانوں پر مشتمل تھا اور زیادہ تر لوگ خوشحال تھے لیکن اب بیشتر کنبے بے گھر ہوچکے ہیں اور ان کی زندگیاں انتشار کی لپیٹ میں آگئی ہیں۔

علاقے کے37 سالہ دھیرج شرما کا کہنا ہے کہ ڈیم نے انکی خون پسینے سے کمائی ہوئی ہر چیز ان سے چھین لی۔

35 سالہ جبینہ کھانڈے پل ڈوڈہ میں پانچ کمروں والے مکان میں اپنے والدین اور تین بہن بھائیوں کے ساتھ رہتی تھیں لیکن بگلیہار ڈیم کی وجہ سے اسکے خاندان کو بھی بے گھر ہونا پڑا اور انکے کے والد 70 سالہ غلام محمد کھنڈے اپنی دکان سے محروم ہوگئے جبکہ چھوٹا بھائی فضل احمد اسکول چھوڑنے پر مجبور ہوا اور بالآخر یہ خاندان دور دراز کے ایک اور گاں میں جا بسنے پر مجبور ہوا جہاں یہ پھر سے اپنے پاں پر کھڑا ہونے کی جدوجہد کر رہا ہے۔ بھارتی زیر انتظام جموں کشمیر کے قابض حکام نے 2008 میں زمین کی نشاندہی کر کے متاثرہ خاندانوں کی یہاں بسانے کے احکامات دیے تھے لیکن 12 سال گزرنے کے باوجود متاثرین تاحال دربدر ہیں ۔

6 تبصرے “بھارتی کشمیر: بگلیہار ڈیم کی انسانی قیمت، دستاویز فلم برطانیہ میں‌نمائش کیلئے پیش

  1. Pingback: UNICC SHOP
  2. Pingback: pinewswire.net
  3. Pingback: kid

Leave a Reply

Translate »
%d bloggers like this: